Entertainment

نادان دل قسط نمبر 2

کوئی امید بر نہیں آتی
کوئی شکل نظر نہیں آتی

ماہی یار شکل نہیں صورت ارے یار صورت لکھا ہے اس میں د یکھ میں پڑھتی ہوں

کوئی امید بر نہیں آتی
کوئی صورت نظر نہیں آتی

موت کا ایک دن معین ہے
نیند کیوں رات بھر نہیں آتی

سمیرا وہ جو انگلش والے سرہیں نہ یار وہی جو اکیڈمی میں ہوتے سر ڈون۔۔۔۔۔۔

ہاں کیا ہوا انھیں ماہی بتاوں نہ کل تک تو وہ ٹھیک تھے؟

ارے کچھ نہیں ہوا۔۔۔ سر مجھے بتا رہے تھے انھیں بھی ساری رات نیند نہیں آتی پتہ ہے کیوں؟

سمیرا نے آپنے کان میری طرف کیے اور وہ آنکھوں کو ایسے گھومنے لگی جیسے دنیا کی نظروں سے چھپ کرآج اسے بہت بڑا خزانہ ملنے والا ہے- ہا ں تو بتاو کیا کہا سر ڈون نے

ماہی نے آپنے زبان کو دنتوں تلے دوبتے ہوے شرات اور معصومیت سے کہا پتہ ہے سمیرا سر کے گھر مچھر ہے ہاۓ جو ساری رات انھیں سونے نہیں دیتے مجھے لگتا ہے “مرزاغالب “کہ  ساتھ بھی یہی مسئلہ تھا ۔ جو وہ کسی کو بتاتے نہیں تھے یہ بات کہتے ہوۓ میں جلدی سے اٹھ کھڑی ہوئی اور تیزقدموں سے کمپیوٹر لیپ کی طرف جانے لگی۔ سمیرا کی خون خار نظریں میرے بڑھتے ہوے قدموں کا پیچھا کرتی رہی اور میرے کانوں کی سمتوں سے سمیرا کی آواز ٹکرا ٹکرا کر گرتی رہی

ما ۔۔ میں کہتی رک ماہی۔۔۔

ہمارا کمپیوٹر کا آخری لیکچر ہوتا تھا۔ ایک کمرے میں 20 کرسیاں لگی ہوتی تھیں پرسٹوڈنٹ زیادہ نہیں تھے۔ کل ملا کہ بس 8 کھڑکیاں تھی ڈائس کے پاس کھڑے سرعامر! ان پٹ اور اؤٹ پٹ میں فراق بتا رہے تھے

Sir may i come in? میں نے کلا س میں داخل ہونے کے لیے پوچنا چاہ

اتنے میں سمیرا نے میرا ہاتھ زور سے د با دیا اور بے تحاشہ میرے منہ سے نکل آیا

sir sumaira commenee

sorry sir تھی کہ ساری کلا س ہنس پڑی وہ وہ Load آواز اتنی

آج تو لگا سمیرا نے سارے بد لے لےلیے ہوں۔۔۔۔۔۔۔

کلا س سے باہر آتے ہوۓ شہربانوں نے بتایا ارے تم لوگوں کو پتہ چلا نیلم نے خود کشی کرلی۔۔۔۔۔۔۔ ۔

میں نے اپنا بیگ ٹھیک کر تے ہو ۓ دیکھا سمیرا شہربانوں کے ساتھ باتیں کرنے میں مصروف تھی میں  نے جلدی سے پو چھا وہ کیوں؟؟

 

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button