Islamic

ختم نبوت کا سلسلہ

حضرت آدم علیہ السلام سے نبوت کا جو سلسلہ شروع ہوا وہ خاتم المرسلین حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر آ کر اپنی تکمیل کو پہنچ گیا اور ختم ہوگیا۔
رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے آنے والے انبیاء کی نبوت کسی خاص قوم یا ملک کے لیے ہوتی تھی مگر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نبوت قیامت تک کے تمام انسانوں کے لئے ہے۔
ترجمہ: (اے محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) آپ کہو اےلوگو! میں رسول ہوں اللہ کا تم سب کی طرف۔
حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پوری انسانیت کے لئے ابدی صفحہ ہدایت لے کر تشریف لائے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تشریف آوری سے ہدایت کا سلسلہ اپنے تمام کو بھی پہنچااور اختتام کو بھی کہ ارشاد ہوا:
ترجمہ: “آج میں نے تمہارے لئے دین مکمل کر دیا تم پر اپنی نعمت تمام کردی اور تمہارے لئے اسلام کو بطور دین پسند کر لیا ”
دین مکمل, نعمت مکمل اور اسلام پر رضائے الہی کا اظہار رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے آخری نبی اور رسول ہونے کا اعلان ہے. کے اب کسی اور نبی کی ضرورت نہیں رہی اس لیے کہ احکام الہی مکمل ہوگئے اب اس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو تاابد مشعل راہ بنانا ہے اور رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے قبل انبیاء کرام علیہم السلام، علاقوں،قبیلوں یا خاص قوم کی طرف مبعوث ہوئے تھے اس لئے مختلف معاشرے تشکیل پاتے رہے تھے اب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی آمد سے بین الاقوامیت کا تصور بھرا، ایک مرکز، اسوہ اور ایک صحیفہ ہدایت نے نسلی انسانی کو وحدت آشنا کر دیا۔
قرآن مجید میں ارشاد ہے:
“فرما دیجئے کہ اے لوگو! میں تم سب کی طرف اللہ تعالی کا رسول بن کے آیا ہوں”۔ اور یہ کہ
ترجمہ:

(محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تم میں سے کسی مرد کے باپ نہیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تو اللہ تعالی کے رسول اور انبیاء کے خاتم ہیں)

اب انسان کو ہدایت ایک ہی در سے ملے گی۔ پریشان نظریں ختم ہوئی ۔اب تلاش کا مرحلہ تمام ہوا۔ سب کو اللہ تعالی پر ایمان لانا ہے۔ اس ایمان کو محبت کا جوہر عطا کرنا ہے۔ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی محبت و اطاعت اور اتباع سے احکام الہی کا پابند بننا ہے۔ اسی میں دنیا کی بھلائی ہے اور اسی میں آخرت کی نجات ہے.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Check Also
Close
Back to top button