Islamic

مایوس نہ ہوں بس یہ دو کام کریں نوکری گھر اور شادی کیلیے مجرب ترین عمل

مایوس نہ ہوں بس یہ دو کام کریں نوکری گھر اور شادی کیلیے مجرب ترین عمل۔ اس دور میں پیسے تو معاشرے کے بے شمار مسائل ہیں. ہر فرد ہر خاندان ہر طبقے اور ہر خطے کے لوگوں کے مسائل کی نوعیت مختلف ہو سکتی ہیں۔ لیکن کنواروں کو رشتہ ازدواج سے منسلک کرنے کا کام ایک مشکل مرحلہ ہے. حالانکہ لڑکی اور لڑکے کے درمیان رشتہ قائم کرنا ایک انتہائی آسان کام ہے. جسے معاشرے نے بنا دیا ہے.
کنوارا لڑکا ہو یا پھر لڑکی دونوں کی ہی والدین اور سربراہ اچھے رشتے کی عدم دستیابی سے فکرمند نظر آتے ہیں. اہل علم کا ماننا ہے کہ آسمان پر لوح محفوظ میں ہمارا رشتہ بھی ہوا ہے. جیسا کہ ہماری تقدیر لکھی ہوئی ہے. اللہ تعالی کے علم میں پہلے سے ہی یہ بات ہے کہ انسان اپنی زندگی میں کیا کیا کرنے والا ہے؟ لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ انسان کے بس میں کچھ نہیں. انسان کو شعور دیا گیا ہے. جسے استعمال کر کے وہ اپنی زندگی کے فیصلے کرتا ہے. اگر یہ فیصلے غلط ہو جائیں اور ان کے نتیجے میں پریشانی ہو تو اس کا ذمہ دار کسی صورت میں بھی قدرت کو نہیں ٹھہرایا جا سکتا. معاملہ جو بھی ہو یہ جوان اولاد کے والدین سے بڑھ کر کوئی محسوس نہیں کر سکتا. خاص طور پر وہ والدین جن کے گھروں میں بیٹیاں اس وجہ سے بیٹھی بیٹھی بوڑھی ہو رہی ہیں کہ مناسب رشتہ نہیں ا رہا.

جن بیٹے بیٹیوں کی شادی نہیں ہو رہی وہ بس آج کا ایک عمل کر لیں. یہ عمل شادیوں میں رکاوٹ دور کرنے کا سب سے مجرب عمل ہے. بلکہ ہر وہ کام جس کا حل بظاہر مشکل نظر ا رہا ہو اس اسم پاک کے عمل کی برکت سے آسانی سے حل ہو جاتا ہے. شادی سے متعلق تصور کریں آپ کو ایک ہی امتحان بار بار دینا پڑے. یا ایک ہی ملازمت کے لیے کئی بار انٹرویو کا بلاوا آئے یا پھر عدالت میں کسی مقدمے کے لیے تاریخ پر تاریخ بھگتنی پڑے. یقینا آپ جھنجھلا جائیں گے. جنوبی ایشیا کے قدامت پسند معاشرے میں ان گنت عورتیں روز اس تکلیف و تجربے سے گزرتی ہیں. وہ میک اپ کر کے کھانے کی ٹرے تیار کرتی ہیں. پھر یہ ٹرے لے کر اجنبی مہمانوں کے سامنے جاتی ہیں۔ جو اپنے طے شدہ معیار کے مطابق انہیں پر رکھتے ہیں. اور پسند یا ناپسند کرتے ہیں. یہ اس معاشرے کے ارینج میرج سسٹم کا ایک حصہ ہے. پاکستان کے شہر کراچی سے تعلق رکھنے والی ہماری ایک بہن راحت رضا کی شادی کے لیے ایک یا دو نہیں بلکہ چالیس رشتے آئے.
جو سب کے سب لڑکے والوں کی جانب سے مسترد کر دیے گئے. وہ کہتی ہے کہ فون پر بتایا جاتا تھا ایک رشتہ ہے اور بس اس کے بعد لڑکے کے گھر والے آ جاتے تھے. مجھے دیکھا جاتا تھا اور پھر وہ لوگ غائب ہو جاتے تھے. کچھ دن بعد مجھے پتہ چلتا تھا کہ مجھے مسترد کر دیا گیا ہے. اب راحت رضا کا خیال تھا کہ شاید انہیں اس لیے مسترد کیا جا رہا ہے کیونکہ ان کا وزن زیادہ ہے. لیکن اصل میں ایسا نہیں تھا. میرے اردگرد کئی ایسی لڑکیاں تھی جن کا وزن مناسب تھا اور جو معیار کے مطابق خوبصورت بھی تھیں لیکن ان کے رشتے بھی اسی طرح مسترد کر دیے جاتے تھے. بس یہ تھا کہ وہاں وجہ کوئی اور ہوتی تھی. کبھی لڑکی کا قد زیادہ ہوتا تھا. کبھی وہ ضرورت سے زیادہ تعلیم یافتہ ہوتی تھی. اور کبھی اس کی ملازمت کی خواہش اس کو مسترد کرنے کی وجہ بنتی تھی. بہرحال شادی میں رکاوٹ خواہ کسی بھی وجہ سے ہو اس کو دور کرنے کے لیے متعلقہ فرد روزانہ بعد عصر گیارہ سو چھپن مرتبہ یا فتاح پڑھے.
یہ عمل اگر خود نہ پڑھ سکتا ہو تو گھر کا کوئی بھی شخص اس کے لیے پڑھ کر دعا کرے. عمل کی مدت چالیس تا ستر یا پھر نوے یوم تک جاری رکھیں. دوران عمل وقتا فوقتا حسب توفیق مقصد میں کامیابی کے لیے صدقہ بھی کیا کریں. انشاءاللہ تعالی جلد ہی اللہ تعالی کے کرم سے اچھی جگہ رشتہ ہو جائے گا. اسکے علاوہ لڑکی خود یا اس کے والدین یا بہن بھائی والد وغیرہ ہر بدھ کو باوضو اول گیارہ بار درود شریف پڑھیں. اور اس کے بعد سورہ یوسف پارہ نمبر بارہ مکمل تلاوت آخر میں گیارہ بار درود شریف پڑھ کر شادی کی دعا کرے. اسی طرح ہر پیر کو باوضو اول گیارہ بار درود شریف پڑھے. اس کے بعد سورہ احزاب پارہ نمبر اکیس کی تلاوت کرے. آخر میں گیارہ بار درود شریف پڑھے. یہ عمل مسلسل کرے ناغہ نہ کرے اور اس وقت تک کرے جب تک شادی نہ ہو جائے. شادی ہو جانے کے بعد چھوڑ دیں. انشاءاللہ تعالی اچھی اور مناسب جگہ رشتہ ہو جائے گا. جس زمانے میں راحت رضا کی پے در پے رشتے مسترد ہو رہے تھے.
تو انہوں نے بھی یہ عمل کیا تھا. اور آج وہ اپنے شوہر کے ساتھ خوش ہیں. دوستوں یہ بھی یاد رہے کہ الفتح. اللہ تعالی کی صفاتی ناموں میں سے ایک نام ہے. الفتح کے معنی ہیں بتا دینے والا مشکل کشا وہ ذات جس کی مہربانی سے ہر شے کھل جاتی ہے. البتہ اسکے معنی فیصلہ کرنے والا اور کھولنے والا ہے. بعد از نماز فجر دونوں ہاتھوں کو سینے پر رکھ کر ستر بار یا فتح کا ورد کریں. دل صاف و شفاف ہو جاتا ہے. زنگ میل دور ہو جاتا ہے. نور و صفائی قلب کے لیے ازحد موضوع ہے۔ جو بھی فرد کثرت سے اس اسم کا ورد کرے گا. اللہ تعالی فتح و نصرت عطا فرمائے گا. بلکہ اگر کوئی کسی مشکل کو سلجھانا چاہے تو عشاء کی نماز کے بعد ایک سو ستر مرتبہ اس اسم کو پڑھے گا تو فتح و کشادگی حاصل ہوگی. اور حق کے راستے کا حجاب اس سے ہٹا دیا جائے گا. اور اسے انشاءاللہ تمام امور میں آسانی اور رزق میں اضافہ ہو گا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button