Entertainment

کوکا کولا بنانے والی کمپنی کی حقیقت

حفظان صحت اور بقائے حیات کے لیے مشروبات انسان کی ضروریات میں سے ایک ہے. لہذا انسان اپنی پیدائش سے لے کر موت تک روزانہ کئی کئی بار ان مشروبات کا لطف اٹھاتا ہے. جبکہ ارشاد باری تعالی بھی ہے کہ ہم نے تمہیں نہایت میٹھا پانی پینے کے لیے دیا. مشروبات پینے کا سلسلہ بنی آدم کی پیدائش سے لے کر اب تک عروج پر ہے. جو کہ ہر دور میں مختلف ذائقوں سے بنا کر استعمال کیا جاتا رہا. جبکہ موجودہ دور میں ایسے ہی مشروبات میں سے ایک کوکا کولا ہے۔ جس نے اپنے ذائقے سے پوری دنیا کے لوگوں کو اپنا گرویدہ بنا لیا ہے. کوکا کولا کا فارمولا تیار کرنے والا جان سٹیف 8 جولائی 1831 کو جورجیا میں پیدا ہوا. وہ ایک امریکن فارماسیسٹ تھا اور مشہور زمانہ کوکا کولا کی ایجاد اس کی وجہ شہرت بنی.
سٹیتھ پیمنٹن نے ریفارم میڈیکل کالج جورجیا میں داخلہ لیا اور انیس سال کی عمر میں فارماسیسٹ کی صنعت حاصل کی. امریکن سول وار کے دوران اس نے جنگ میں بھی حصہ لیا اور وہ لیفٹیننٹ کرنل کے عہدے تک پہنچ گیا. لیکن جب اس کے پیٹ میں کسی وجہ سے شدید درد ہوا تو وہ درد سے چھٹکارے کے لیے مورفین استعمال کرنے لگا جس سے وہ نشہ آور شربت کا مستقل طور پر عادی ہو گیا. لہذا اس نے اس نشے سے چھٹکارے کے لیے ایک شربت ایجاد کیا جسے کوکا وائن کا نام دیا گیا. جس میں ڈومینیا اور کولا نیٹ کا عرق شامل کیا تھا.
دوستوں اس کے بعد سٹیز جنگی ڈپریشن کے شکار اور زخمی لوگوں میں انتہائی مقبول ہو گیا. لیکن جب اٹلانٹا اور فولڈن کاؤنٹی کے درمیان منشیات کی روک تھام کے حوالے سے معاہدہ طے پایا اور قانون بنا تو سٹیف کو مجبورا اپنی اس دوا کو الکوحل سے پاک کرنا پڑا.
اس نے مزید اس پر تحقیقات کیں اور اس سے ایک دوا کے بجائے عام شربت کے طور پر بیچنے کا فیصلہ کیا. اور اس میں کاربونیٹڈ نمک کا استعمال کیا گیا. اور یوں مئی اٹھارہ سو چھیاسی میں اسے کوکا کولا کے نام سے دنیا کے سامنے لایا گیا.
شروع شروع میں کوکین کا مواد کافی تنازعات کا شکار بھی ہوا۔ لیکن سٹیتھ پیمبرٹن نے مصنوعات کے لیے بہت سے صحت مند دعوے کیے. اور کہا کہ یہ قیمتی دماغی ٹانک ہے۔ جو سر درد، دماغی طور پر پرسکون اور تر و تازہ رکھنے کے لیے موثر ہے. اب کیونکہ اس زمانے میں امریکہ میں خیال کیا جاتا تھا کہ سوڈا یا کاربونیٹڈ واٹر صحت کے لیے اچھا ہوتا ہے. لہذا وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ عوام میں بے حد مقبول ہونے لگا.
کہا جاتا ہے کہ اس زمانے میں کوکا نامی ایک پودے کا استعمال بھی ہوتا تھا. جس سے بدنام زمانہ منشیات کوکین حاصل کی جاتی تھی. اس زمانے سے لے کر آج تک کوکا کولا کی خفیہ ترکیب دنیا کا سب سے بڑا راز ہے. اور ابھی بھی یہ کوکا نامی پودا جنوبی امریکہ میں پایا جاتا ہے۔ جس کے پتوں کے ایکسٹریکٹ سے دنیا کا مہنگا ترین نشہ کوکین بنایا جاتا ہے. انیسویں صدی میں اس درخت کے پتوں کا ایکسٹریکٹ جنسی کمزوری، مارفین کے نشے کی عادت ترک کروانے، اور دیگر کئی بیماریوں کے علاج کے لیے استعمال ہوتا تھا. جبکہ سن 1903 تک یہ کوکا اس مشروب کے فارمولے میں شامل رہا. بلکہ کوکا کولا کا نام بھی اسی جوس کی وجہ سے رکھا تھا. لیکن بعد میں جب کوکا کو منشیات قرار دیا گیا تو کوکا کولا نے اس کو اپنے فارمولے سے خارج کر دیا.
سٹیف پیمٹن کی وفات کے بعد سن اٹھارہ سو چھیانوے میں ایک بزنس مین ایزا گری کینڈلر نے اسکو جدید طریقے سے مارکیٹ کرنا شروع کر دیا. اور دیکھتے ہی دیکھتے کوکا کولا بیوریج انڈسٹری پر چھا گئی. جبکہ اس کی موجودہ بوتل کا ڈیزائن سن 1915 میں متعارف کروایا گیا تھا.
یہ ڈیزائن اس قدر مقبول ہوا کہ کوکا کولا کی ساری دنیا میں مقبولیت میں اس کا خصوصی کردار رہا. جبکہ گزشتہ ایک صدی کے دوران سینکڑوں دیگر کمپنیوں نے بھی اس کی نقل کی. ان تمام وضاحتوں کے بعد جب کوکا کولا کے فارمولے پر بات کریں تو ہمیں یہی سننے کو ملتا ہے کہ اس کا اوریجنل فارمولا صرف اس کے مالک یا چند اور لوگوں کے پاس ہے. اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ اس کا اصلی فارمولا ایٹ لینٹا کے سنٹریس بینک کے ایک لاکر میں گزشتہ چھیاسی سال سے محفوظ ہے. جبکہ امریکہ میں واقعہ کوکا کولا کمپنی اصلی فارمولے کے مطابق صرف مشروب کا شربت یا سیرپ بناتی ہے. لیکن اس کی ریسیپی کو آج تک منظر عام پر نہیں لایا گیا.
کوکا کولا کا یہ فارمولا سخت حفاظتی سسٹم کے اندر موجود ہے اور لوگ اس کی کھوج میں ہیں. کہ آخر اس ریسیپی میں ایسی کیا خاص بات ہے جسے ہائی ٹیک والٹ کے اندر محفوظ کیا گیا ہے؟ کہا جاتا ہے کہ اس خاص ریسپی کو کوک کے حکام بالا میں سے صرف دو لوگ ہی دیکھ سکتے ہیں. انہیں بھی یہ اختیار دینے سے پہلے حلف اٹھانا پڑتا ہے کہ وہ کبھی بھی اس راز کو افشاں نہیں کریں گے. اس سے یہ تاثر پیدا ہو جاتا ہے کہ آخر کوئی وجہ ہے کہ اسے اتنا محفوظ رکھا جا رہا ہے. دوستوں ان تحفظات کے پیش نظر کم از کم مسلمانوں کو ایسے مشروبات سے پرہیز کرنا چاہیے جس کے حلال و حرام میں شک ہو. اور اسی ضمن میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم مشروب جو کہ ہر لحاظ سے بہترین ہیں کہ استعمال کو اپنی ضدیوں میں لائیں. جیسے ستو، شہد, پانی کا شربت، دودھ اور پانی کی کچی لسی، کھجور اور کشمش کا نوید وغیرہ. یہ تمام مشروب فوری توانائی فراہم کرنے کے علاوہ پیاس کو تسکین پہنچاتے ہیں.
اللہ تعالی ہمیں حلال اور مفید مشروبات کو اپنی زندگیوں میں لانے کی توفیق عطا فرمائے. آمین ثم آمین.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button