Science & Technology

واٹس ایپ کی حقیقت

واٹس ایپ کی حقیقت
تحریر : چودھری عرفان الخالق۔۔۔۔
بیٹا تم یہ موبائل بہت زیادہ استعمال کرتے ہو تمہاری آنکھ کی بینائی متاثر ہو جائے گی جب دیکھو موبائل تمہارے ہاتھ میں ہوتا ہے ناجانے اس میں سے تم کیا نکالتے رہتے ہو
اف یہ بزرگ بھی نا جب دیکھو نصیحت کرنا شروع ہو جاتے ہیں نایاب نے بزرگ کی بات سن کر دل ہی دل میں انکو کوسنا شروع کر دیا
بیٹا اس موبائل میں مگن رہنے کے دنیا و آخرت کے بہت سے نقصانات ہیں
یہ بزرگ جمیل چچا تھے جو سب نوجوانوں کو موبائل میں مگن دیکھ کر بہت پریشان ہوتے تھے اور روز کسی نہ کسی کو راستہ میں روک کر نصیحت کرنا انکا معمول تھا لیکن نوجوان ان کی بات سن کر نکل جاتے تھے لیکن انکی باتوں کو سمجھنے کی کبھی کسی نے کوشش نہیں کی لیکن جمیل چچا اپنی اس روش کو برقرار رکھے ہوئے تھے.
اسی طرح دن گزرتے رہے
ایک دن محلہ کے کچھ نوجوان گلی سے گزر رہے تھے تو سامنے بیٹھے جمیل چچا کو دیکھ کر سب حیران رہ گئے اور ایک دوسرے کی جانب تجسس بھری نگاہوں سے دیکھنے لگے کیوں کہ موبائل سے روکنے والے جمیل چچا ایک بڑا سا موبائل ہاتھ میں لیے ایسے گم تھے کہ جیسے اللہ دین کا چراغ ہاتھ لگا ہو
جمیل چچا جو ترچھی نظر سے ان نوجوانوں کو آتا دیکھ چکے تھے اشارے سے اپنے پاس آنے کو کہا اور پاس بیٹھا کر اپنے موبائل میں سے ایک ایپ پر انگلی رکھ کر پوچھا کہ بیٹو یہ کیا ہے سب نے یک زبان ہو کر کہا واٹس ایپ چچا
تم سب یہ استعمال کرتے ہو سب کا جواب ہاں میں تھا
تو پھر تم نے اس سے کیا سیکھا؟
سب ایک دوسرے کو دیکھتے ہوئے بولے چچا اس میں سیکھنے والی ایسی کیا چیز ہے جو ہم نے سیکھنا تھا
جمیل چچا بتانے لگے کہ بیٹا میں آج تک تم لوگوں کوستا رہا آج میں نے سوچا کہ میں بھی استعمال کر کے دیکھوں ذرا
جب میں نے واٹس ایپ دیکھا تو مجھے ایک بات سیکھنے کو ملی جو تمہیں بتاتا ہوں
واٹس ایپ میں جو تمہیں زیادہ میسج کرتا ہے اسکا نمبر چیٹ میں سب سے اوپر ہوتا مطلب وہ زیادہ قریب ہوتا ہے اسی طرح جو کچھ دن بعد میسج کرتا ہے وہ اس سے نیچے اسی طرح ترتیب سے جو تمہارے ساتھ رابطہ کم رکھتا ہے اس کا نمبر سب سے آخر پہ ہوتا ہے اور جو تم سے رابطہ ہی نہیں رکھتا وہ واٹس ایپ کی چیٹ میں ہوتا ہی نہیں مطلب وہ تمہاری نظر میں کبھی نہیں آتا،
اسی طرح میرے عزیزو اللہ رب العزت کے ساتھ جو زیادہ رابطہ میں رہتا ہے 5 وقت کی نماز جو ہم پر فرض ہے بروقت ادا کرتا ہے اللہ کے راستہ میں نکلتا ہے ہر نیکی کے کام میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتا ہے وہ اللہ کے قریب ہوتا ہے اور پھر اللہ اس کی سنتا بھی سب سے زیادہ ہے اور جو کبھی کبھی یا صرف جمعہ کی نماز کےلیے مسجد جاتے ہیں انکا درجہ کم اور جو بالکل مسجد نہیں جاتا اس کا کیا حال ہو گا.
اللہ کے قریب ہونے کے لیے اللہ کے بھیجے گئے میسج قرآن پاک کی تلاوت کریں
اللہ سے چیٹنگ نماز سے کریں اللہ کو خوش کرنے کے لیے اللہ کی تعریف اس کے ذکر سے کریں اس طرح آپ اللہ کے قریب ہوتے جائیں گے
آج مجھے واٹس ایپ کی اصل سمجھ آئی کہ یہ واٹس کیا ہے
چلتے چلتے عرض ہے کہ اگر تحریر اچھی لگے تو تبصرہ میں حوصلہ افزائی فرمائیں اور دوستوں کے ساتھ شیئرکریں
جزاک اللہ خیرا و احسن الجزاء

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button